Archive for February, 2016

گدا گر ( افسانہ )۔

گدا گر ( افسانہ )۔

تحریر : محمد نواز
شہر کی بغل میں مشرقی سمت جھوگیوں کا ایک شہر آباد تھا ،جہاں تک نظر جاتی تھی رنگ برنگی جھوگیاں ہی جھوگیاں نظر آتی تھیں ۔ رنگ برنگی اس لیے تھی جھوگیوں کی اوپر کی چھت ان رنگ برنگے پرانے کپڑوں سے بنی تھی جو ان جھوگیوں میں رہنے والی عورتیں شہر کے پاپوش علاقوں سے مانگ تانگ کر لاتیں تھی۔ان پرانے کپڑوں سے ایک دو ہفتے کا فیشن رچاتی ،زیب تن کرتیں جب دھونے کی باری آتی تو ان کپڑوں کو پیوندلگا کر چھت بنا لی جاتی ۔دور سے نیلی، پیلی، کالی ،سرخ اور غلابی رنگ کی چھتیں سورج کی چلماتی دھوپ میں لشکارے مارتی جیسے ان جھوگیوں کی چھتوں کے اوپر کپڑے کی بجائے قوس قضا اتر آئی ہو ۔چھتوں کے اوپر قوس قضا بکھری تھی مگر ان کے اندر زندگی ایڑھیاں رگڑے اپنی منزل کی طرف رواں تھی ۔انتہائی کمسپرسی میں گزارتے ان جھونپڑیوں […]

تحریر : عبدالرحمن

نیا سال اور نیا پاکستان۔۔۔تحریر : عبدالرحمن

ہماری زندگی کاگزشتہ سال کچھ انوکھا، کچھ نامانوس ،کچھ تکلیف دہ، کچھ مزے دار، کچھ پر لطف ،کچھ دل کے دکھ اور جلن، کچھ اداسی اور حرماں نصیبی، کچھ بے معنویت اور بدمزگی کے ساتھ کچھ مگر کتنا ہی کچھ…..کچھ ایسے ہی جذبات اور احساسات کا ملا جلا سا تاثر لیے 2015 رخصت ہوا اور خدا کی مہربانی سے ہمیں 2016 کا سورج دیکھنا نصیب ہوا ۔
گزشتہ سال ہم نے بہت کچھ کھویا بھی اور بہت کچھ پایا بھی۔ لیکن لمحہ فکریہ یہ ہے کہ کیا ہم نے گزشتہ سال سے کوئی سبق حاصل کیاٖ؟کیا اس قوم نے اپنے فائدے اور نقصان،غلط اوردرست،حق اور با طل، قاتل اور مقتول ،ظالم اور مظلوم کا فرق جان لیا ہے۔ مجھے تو بظاہر ایسا ہوتا ہوا نظر نہیں آرہا۔
پاکستان کے اطراف واکناف کا سیاسی و عسکری نقشہ تیزی سے تبدیل ہو رہا ہے۔ ایک طرف ہمسایہ ملک بھارت سے لفظی جنگ ذرا مدھم […]

غریب شہر ترستا ہے اک نوالے کو

غریب شہر ترستا ہے اک نوالے کو

نصف شب بیت چکی تھی مگر نیند کی دیوی آج اداس تھی بسترمخمل پر کروٹیں بدلتے بدلتے ایک آواز سنائی دی جو کسی کے رونے کی آوازتھی شہنشاہ فوراََ خواب آغوش سے باہر�آئے خوابگاہ کے باہرچاروں سمت دیکھا اور اور محل کے بیرونی حصے میں نکل پڑے اچانک بیرونی دیوار کی طرف یخ بستہ رات میں ایک شخص کو دیوار کیساتھ لگ کر روتے ہوئے پا یا حیرانی وپریشانی بڑھ گئی استفسار کیا تو بتا یا گیا کہ جناب کی رعایا میں سے ہوں شدید اضطراب میں ہوں کبھی کبھی رات کے وقت شاہی محل سے برامد ہو نے والا نوجوان میر ے گھر آتا ہے اور میر ی بیوی کو زدوکوب کر تا ہے اور مجھ پر بھی وحشیانہ تشدد کر تا ہے۔ مظلوم کی فریاد سن کر بادشاہ کی آنکھوں کے کنارے گیلے ہو گئے فوراََ بازوتھا ما اور شاہی محل کے اندر لے گئے تمام دربان خاص […]

نعرہ بازی کمزور لوگوں کا شیوہ

نعرہ بازی کمزور لوگوں کا شیوہ

جاپان دنیا کا واحد ملک ہے جس پر امریکہ نے ایٹم بم گرایا اس لحاظ سے امریکہ جاپان کا بد ترین دشمن ہونا چاہیے لیکن جاپان میں لوگ امریکہ مردہ باد یا مرگ بر آمریکہ کیو ں نہیں کہتے یہ ایک ایسا سوال ہے جس پر ہمیں غور کرنا چاہیے ۔ کسی نے جاپانی شہری سے پوچھا تھا کہ آپ امریکہ کے خلاف نعرہ بازی کیوں نہیں کرتے جس پر اس شخص نے مسکراہ کر جواب دیا کہ نعرہ بازی کمزور لوگوں کا شیوہ ہے جو عملا کچھ نہیں کر سکتے آج امریکی صدر کے دفتر میں پینا سونک کی ٹیلیفون اور سونی کا ٹیلی ویژن رکھا ہو گا جو کہ جاپان کے بنے ہوئے ہیں یہی ہماری جیت ہے اور یہی ہمارا بدلہ ہے۔
اسی طرح چین کے بانی موزے تن نے جب چین کی ترقی کی بنیاد رکھی تو اس وقت چین کے لوگ ان پڑھ اور نہایت ہی […]

وزیر اعظم صاحب کیا چاہتے ہیں

دیکھیں ہمارے سیاستدان کیا چاہتے ہیں

دیکھیں ہمارے سیاستدان کیا چاہتے ہیں

چائے کی پیالی

چائے کی پیالی

ہم سب کے بہت سے دوست احباب ہوتے ہیں ان میں اکثر سیاسی جماعتوں سے تعلق رکھنے والے اور مختلف نظریات کے قائل لوگ بھی ضرور ہوتے ہیں لیکن ہم پھر بھی انکی غمی خوشی میں بھی شریک ہوتے ہیں بلکہ پاکستان میں بہت سے سرمایہ دار جو کہ سیاسی جماعتوں پر قابض ہیں ان میں بہت سے لوگ آپ کو ایسے بھی ملے گے جو مختلف سیاسی جماعتوں سے نہ صرف تعلق رکھتے ہو گے بلکہ انکے پاس جماعت کا کوئی بڑا عہدہ بھی ہو گا لیکن پھر بھی وہ ایک دوسرے سے نہ صرف ملے گے بلکہ کاروبار اور رشتہ داریاں بھی کرے گے۔
اس کے بر عکس مقامی سطح پر کارکنان کو آپس میں لڑوایا جاتا ہے نفرت میں لوگوں کی زندگیاں تباہ و برباد ہو جاتی ہیں اور دشمنی نسل در نسل بھی چلنا شروع ہو جاتی ہے ۔اور اگر کوئی درمیانے طبقے سے تعلق رکھنے والا […]

آزادی یا منافقت

آزادی یا منافقت

حدیث مبارکہ ہے کہ ماں باپ زندہ ہوں تو انکی خدمت کرنا افضل ترین جہاد ہے ۔صحیح بخاری
بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح نے کہا تھا کہ کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے کہنے کو تو یہ فقط ایک چھوٹا سا جملہ ہے لیکن اس کے اندر ایک بڑی داستان چھپی ہے آخر کوئی تو وجہ ہو گی کہ قائد اعظم نے کشمیر کو پاکستان کا اتنا ضروری اور اہم حصہ قرار دیا کیونکہ اگر آپ کسی کی شہہ رگ کاٹ دے تو وہ زندہ نہیں رہ سکتا ۔ شائد یہی وجہ ہے کہ پاکستان کی شہہ رگ پر ہندوستان کا قبضہ ہے جس کو وہ کاٹنے کی مسلسل کوشش میں لگا ہوا ہے۔لیکن پاکستان ابھی بھی زندہ ہے اس کی وجہ یہ بھی ہو سکتی ہے کہ شائد قائد اعظم نے کبھی ایسا کچھ کہا ہی نہ ہو کیونکہ ہم خود بھی اپنی من پسند کہانیاں بنا لیتے […]

پاکستان سپر لیگ کونسی ٹیم جیتے گی ۔۔؟

پاکستان سپر لیگ کونسی ٹیم جیتے گی ۔۔؟

(function(d, s, id){
var js,
fjs = d.getElementsByTagName(s)[0],
p = ((‘https:’ == d.location.protocol) ? ‘https://’ : ‘http://’),
r = Math.floor(new Date().getTime() / 1000000);
if (d.getElementById(id)) {return;}
js = d.createElement(s); js.id = id; js.async=1;
js.src = p + “www.opinionstage.com/assets/loader.js?” + r;
fjs.parentNode.insertBefore(js, fjs);
}(document, ‘script’, ‘os-widget-jssdk’));

تحریر : عبدالرحمن

جنت نظیر آنچل کا انگ انگ لہو لہو: عبدالرحمن

خدائے اعلیٰ و برتر وہ ذات ہے جس کے نام کی عظمت کی کوئی انتہا نہیں ، تو جس کریم و رحیم رب کے نام کے کی عظمت کی کوئی انتہا نہیں ،میں اسی رب کے نام سے ابتدا کرتا ہوں۔
ُْْجب تک نہ جلیں دیپ شہیدوں کے لہو سے
کہتے ہیں کہ جنت میں چراغاں نہیں ہوتا
قومیں پیداہوتیں ہیں مٹ جاتی ہیں،بستیاںآبادہوتی ہیں اجڑجاتی ہیں،تہذیبیں نکھرتی ہیں دھندلا جاتی ہیں، شخصیتیں پیدا ہوتی ہیں مرجاتی ہیں ،داستانیں مرتب ہوتی ہیں مہو ہو جاتی ہیں۔ یہ عمل ابتدائے خلق سے جاری ہے اورانتہائے خلق تک جاری رہے گا۔لیکن کچھ الم ناک داستانیں رقم ہوتی ہیں جو تاریخ کے سینے پر نقش ہو جاتی ہیں ،ایسی ہی ایک الم ناک داستان رقم ہوئی جب سولہ دسمبر کو سات درندہ نما دہشتگردوں نے اے پی ایس پر دھاوا بولا ۔وہ سکول کی عقبی دیوار سے سکول میں داخل ہوئے اور ایک سو چوبیس دلاروں […]

advertise